OPINION: CPEC: A political “Game Changer” for Gilgit Baltistan? |by Siddhartha Garoo

CPEC: A political “Game Changer” for Gilgit Baltistan? | by Siddhartha Garoo 

A two day economic seminar titled “China Pakistan Economic Corridor Harbinger of Prosperity” was held at a fancy hotel in Gilgit Baltistan and presided by none other than General Raheel Sharif, Pakistan’s much loved Chief of Army Staff; senior federal ministers of PML(N) government and the Chief Minister of Gilgit Baltistan  A lot of taxpayer’s money was spent and grand preparations were made in organizing this great sarkari pomp and show.

And yet despite such a high profile nature of the so called “seminar”, the entire event, which was supposed to showcase the “benefits” of the much hyped CPEC project for the region of Gilgit Baltistan (GB) and express the “gratitude” of the people of GB for being part of what is hailed as an economic “game changer” for entire Pakistan ended up turning into a government managed PR exercise that had no intention of connecting with the local population of GB or taking them on board regarding the implementation of the project or its benefits. The whole exercise seemed more geared towards intimidating and suppressing any local political and civil society opposition within GB to the said project and to “warn” neighbouring India, that come what may, the CPEC would go on “at any cost”, which is premised on the belief that currently India’s entire international policy and governance decisions are based only on one thing and that is to “stop CPEC at any cost” and beyond this the state of India has no other work to do. And connecting these two dots is the newly emerged Pakistani state narrative that anyone who raises questions on CPEC is supporter of India ( called “Indian /RAW agent” ) and enemy of the state of Pakistan for which melodramatic words like “qaum ka gaddar” etc. are used.

The problem with the Chinese funded CPEC project is immense mystery in which the entire project is shrouded. Beyond the generalities of where the project will pass through and general estimates of the amount of expenditure to be divided between creating and improving “communication infrastructure” and “energy infrastructure” in different parts of Pakistan, not much information is publically available on individual infrastructure and power projects and therefore no proper and informed critique can be done by Pakistani public or experts on various aspects of CPEC project. For example a lion share of the Chinese investment of roughly $46 billion or an amount of approximately $33 billion is to be spent in creating “power infrastructure”, which could solve Pakistan’s chronic power shortage. However, no environment impact studies or cost feasibility studies have been shared with the public regarding the vast majority of power projects, which are supposed to be run on burning coal (something that will pollute the environment and which is now being discouraged all over the world) or regarding the cost of production of per unit of electricity for the Pakistani consumers.  The whole back stage work on the CPEC project seem to be geared more on hiding than informing the public, which is further sugar coated by nationalistic and patriotic jingoism, so that Pakistani tax payers and infrastructure, power and environment experts find it difficult to ask questions.

Unlike other provinces of Pakistan, the “region” of Gilgit Baltistan (it is still not a constitutional province of Pakistan) has different and unique social, political and geographical connections with the CPEC project.

“If there is no GB, then there is no CPEC”

To begin with, let’s be clear that if there is no Gilgit Baltistan, then there is no CPEC. Geographically, the “region” of Gilgit Baltistan is the mainland Pakistan’s only land border with China. Except for GB, no other province of Pakistan shares a land boundary with China. Had it not been the decision of the elders of former “Gilgit Agency” to merge their region, whose independence they won solely by themselves by fighting the Dogra rule, with the newly created state of Pakistan, the Islamic republic of Pakistan would not have inherited this land of “high mountains” ( also called “Balwaristan”) and thereby its access to China, which today is the state of Pakistan’s only dependable international ally in a hopelessly isolated Pakistan.

Unfortunately for the people of Gilgit Baltistan, the virtues of being part of the Islamic republic of Pakistan have not exactly been mutually beneficial. The deliberate policy of entangling former “Northern Areas”, with the so called “Kashmir dispute” not only created 70 long years of political uncertainty for the region but also a lifelong humiliation for its people, who continue to have no political representation in Pakistan’s parliament and whose fate is effectively ruled (currently) by an ethnic Punjabi politician under a “Federal Ministry of Kashmir” appointed by Islamabad.

The CPEC has in particular thrown some unique problems for the “region” of Gilgit Baltistan, which are related primarily to its “neo-colonial” style arrangement with the state of Pakistan and its entanglement with the so called “Kashmir dispute”. The CPEC’s footprints in GB are technically on an internationally “disputed territory” and that makes this part of the CPEC project particularly sensitive as per international legal norms and thereby jeopardising any Chinese investment on the project. The state of Pakistan’s mad obsession as well as compulsion to involve itself with affairs of Kashmir valley means that the chances of formal incorporation of the “region” of Gilgit Baltistan as constitutional part of the state of Pakistan are as good as being impossible.

“The young and restless Gilgit Baltistan”

But the Gilgit Baltistan of today is not that of the earlier times, when the region for most part of its existence within Pakistan was known as “Northern Areas”, which silently and meekly accepted the loot, plunder and dismemberment of its territory and resources by whoever was sitting in Islamabad. A huge chunk of the sacred land of Gilgit Baltistan was “gifted” to China for “strategic reasons”, sectarian massacres were carried out in large parts of the “region” and voices that opposed state oppression of human rights of the people of GB were framed under fake charges and thrown in prison like the legendary leader of GB, comrade Baba Jan.

However today in 2016, a younger generation has come of age, that has decided not to take the subservience of the state of Pakistan quietly. Unlike their forefathers, this younger generation of internet savvy young men and women that include students, commentators, journalists, artists and common man and woman of Gilgit Baltistan, has grown tired and restless of their hopeless existence within the state of Pakistan. And the shenanigans around CPEC are proving to be the last straw in the patience of the intelligentsia and civil society of Gilgit Baltistan.

“Recent Kashmir unrest and changing “geo politics”

The events of last few months, especially after the recent unrest in Kashmir valley that arose after Indian security forces killed a young Kashmiri separatist militant, with huge following has unwittingly had a profound impact on an otherwise ignored “region” of Gilgit Baltistan.

In a shift of diplomatic policy, Indian Prime Minister openly named “Gilgit” during his Indian Independence Day speech, thanking people of GB for what he described as their “support” to India. Now, it can be debated if the people of Gilgit did actually showed their support to India or was it a tactical move on the part of India to counter state of Pakistan’s continuing support to violent activities in Kashmir valley, but what however remains un-debated is the ferocity with which the region of “Gilgit Baltistan” caught the imagination of not just the state of India but also its people. There has been a growing interest among wider sections of net savvy Indians to learn about this “region”, which technically remains part of India and for which there are still seat reserved in Jammu and Kashmir’s state assembly. The author of this article has seen that the interest is not just on the “strategic importance” of the region of Gilgit Baltistan” but also the region’s natural beauty and its ethnic diversity, with which most Indians were as ignored as most Pakistanis thinking all GBians to be “Kashmiris”. There is a huge cultural curiosity taking shape in India towards Gilgit Baltistan, which many Indians are discovering for the first time.

The recent explosion of interest from India has however only complicated the problems and sufferings of the people of Gilgit Baltistan, where majority of people are not known to have any special preference for India. A large majority of the people of GB would prefer the resolution of the ambiguity of their “neo-colonial” style arrangement with the state of Pakistan but the patience of both the nationalists of GB and vast majority of its “federalists” (a term used for pro-Pakistani GBians) is weaning off. The sinking feeling that their fate, which is linked to an unsolvable Kashmir dispute, is creating restlessness among all sections of GBians.

“CPEC brings unity among people of GB”

But the fact that has really brought virtually all communities, religious groups and followers of different political ideologies in Gilgit Baltistan is the CPEC and the shabby treatment that the “region” and the people of GB have got in the execution of this controversial project at the hands of the state of Pakistan.

Whatever little facts that are emerging out of the implementation of CPEC show that the “region” of GB has got the worst of the deal among all provinces / regions of Pakistan. To begin with none of the representatives, including the elected members of the so called “assembly of Giglit Baltistan” were involved in consultation process over the review of the CPEC project. And when voices were raised over this exclusion of the Gilgit Baltistan to have its say in the project, the local government of the Gilgit Baltistan, which belongs to the same party as that of the Prime Minister Nawaz Sharif, clamped down heavily on the political opposition in one of the most undemocratic and unconstitutional manner even from Pakistan’s own very low democratic standards.

Two very senior leaders of “Awami Action Committee”, an umbrella organization of all political and religious organizations of Gilgit Baltistan were arrested and booked under fake and fraudulent charges, accusing them of effectively being “traitor” and “Indian / enemy agents”. Their fault was only this that they chose to protest against the local elected rudderless government of Gilgit Baltistan over discrimination against the people of GB and exclusion of the “region” of GB in any say relating to CPEC on the day that happened to be India’s Independence day. The local government used this as an excuse to arrest these leaders, accusing them of working on behest of India to what they called “sabotage the CPEC project”. Those political leaders still remain jailed and wait prosecution under notorious “anti terror laws”.

It is however emerging that India / RAW had nothing to do with the whole unnecessary and harsh clampdown and it was more to do with the well thought of act of deliberately silencing any opposition whatsoever to any voice that raises any question over CPEC, which has now been integrated with the national Pakistani narrative of being “patriotic” and is the new definition of being “mohebbe watan Pakistani”.

The whole tamasha of arrest turned out to be a precursor to silencing political voices of opposition before the two day “seminar” in an expensive hotel in Gilgit, which was totally devoid of local people participation and was strictly stage managed with the help of sycophant local government and Islamabad’s pay rolled media. The whole sarkari tamasha was held under close doors where speakers including Pakistan’s most powerful man, General Raheel Sharif hardly addressed the concerns of the region of the people of Gilgit Baltistan focusing more on jingoisms and anti-India threats. There was nothing said to address why GB still remains an unconstitutional province. There was nothing mentioned as to why GB has got literally no investment out of China’s $46 billion investment. Except for using phrases like “great opportunity”, “lot of employment” etc. etc., no detailed reports on specifics was shared by anyone from the civil society of Gilgit Baltistan. And in a rather shameless and incompetency showing gesture, it was indirectly proclaimed that CPEC will include, China developing Gilgit Baltistan like China has “developed” its Xinjiang province across the border from Gilgit Baltistan raising many questions if that means uprooting native ethnic population of Uyghur Muslims and replacing them with outsider Han Chinese. Now who is the native Uyghur and who is outsider in the context of Gilgit Baltistan is a fact known to everyone.

Lastly having said all above, the author of this article feels that Gilgit Baltistan has now entered an interesting phase in its last 70 year history under the administration of Pakistan, where one thing is certain, whether it is the fast changing “geo politics”, a new and resurgent younger generation of GB, more access to non-propaganda information through internet, it is no longer possible for the state of Pakistan to ignore the people or the region of Gilgit Baltistan.


Published in Passu Times English – 3rd September, 2016

About passu

One comment

  1. گلگت بلتستان اقتصادی راہداری منصوبہ
    Gilgit Baltistan Economic Corridor
    تحریر: انجینئر منظور حسین پروانہ
    چئیرمین گلگت بلتستان یونائیٹڈ موؤمنٹ
    پاکستان چین اقتصادی راہداری CPEC))کا منصوبہ عالمی توجہ کا مرکز بنا ہوا ہے ، اس منصوبے نے ایک طرف پاکستان اور چین کے لئے ترقی کی نئی راہیں کھولنے کے امکانات روشن کئے ہیں تو دوسری طرف پاکستان ، بھارت اور چین کے درمیان مفاداتی جنگ کے خدشات کو بھی واضع کر دئیے ہیں ۔ صورت حال کی نزاکت کا اندازہ اس بات سے بخوبی لگایا جا سکتا ہے کہ پاکستان کی سیاسی و عسکری قیادت اس راہداری کے منصوبے کو پاکستان آرمی کی زیر نگرانی میں پایہ تکمیل تک پہنچانے کا بار بار عزم کا اظہار کر چکے ہیں اس منصوبے کے لئے خصوصی فورسس اور نئی چھاؤنیوں کے قیام کے لئے پالیسیاں مرتب کی جارہی ہیں ۔ پاکستان اور چین کی قیادت کا CPEC کے خلاف انٹر نیشنل سازشوں کی تدارک کے لئے کی جانے والی پیشگی اقدامات کے پس منظر میں جنگ و جدل کی خدو خال کو نمایاں طور پر دیکھا جا سکتا ہے۔ پاکستانی میڈیا میں امریکہ اور بھارت کی اس منصوبے کے خلاف سازشوں کی خبروں نے بھی اس منصوبے کوغیر یقینی صورت حال سے دوچار کیاہے ۔ پاکستان چین اقتصادی راہداری منصوبہ کس حد تک قابل عمل ہے ، اس منصوبے سے پاکستان اور چین کوکتنا اقتصادی فائدہ ہوگا اور اس منصوبے کو ناکام بنانے کے لئے کس طرح کی سازشیں ہو رہی ہے ، ان تمام پہلوؤں سے قطع نظر یہ بات قابل ذکر ہے کہ پاکستان چین اقتصادی راہداری نے ایک بار پھر گلگت بلتستان کو عالمی سیاسی منظر نامے کی شہ سرخی بنا دیا ہے۔

    گلگت بلتستان جغرافیائی اور تاریخی اعتبار سے بنیادی طور پر وسطی ایشیاء کا حصہ ہے ، جسے (Gateway of Asia ) بھی کہا جاتا ہے ۔صدیوں کی رقابت کے باوجودگلگت بلتستان کی تاریخ و ثقافت ،تہذیب و تمدن اور روایات وسطی ایشیائی ملکوں سے ملتی جلتی ہیں ، گلگت بلتستان کو دنیا کی چار ایٹمی طاقتوں کے درمیان ایک بفراسٹیٹ(Buffer State) کی حیثیت حاصل ہے ۔گلگت بلتستان دنیا میں تازہ پانی کا سب سے بڑا منبع بھی ہے اور پانی پر لڑی جانے والی تیسری عالمی جنگ کے بارے میں بھی ماہرین کا اشارہ گلگت بلتستان کی طرف ہی جاتا ہے۔ پاکستان چین اقتصادی راہداری نے گلگت بلتستان میں تازہ پانی (Fresh Water) پر جنگ یاگرم پانی(Hot Water) تک رسائی کے لئے جنگ کے خدشات کو نمایاں کر دیا ہے۔
    گلگت بلتستان ایک متنازعہ خطہ (Disputed Territory )ہے، یہ پاکستان اور ہندوستان کی تقسیم کے نتیجے میں اپنی تشخص پہچان اور خودمختاری سے محروم ہو گئی ہے۔ یکم نومبر1947ء سے قبل مہاراجہ ہری سنگھ کی سلطنت ریاست جموں و کشمیر کا حصہ ہونے کی وجہ سے آج بھی اقوام متحدہ کے ایجنڈے پر مسئلہ کشمیر سے منسلک ہے۔ حکومت پاکستان نے آزاد کشمیر کی قیادت سے معاہدہ کراچی 28اپریل 1949ء کے ذریعے اس خطے کا عارضی انتظامی کنٹرول سنبھالا تھا جو کہ ابھی تک چلا آرہا ہے۔ جب بھی گلگت بلتستان کی متنازعہ حیثیت کو تبدیل کرنے کی نا کام کوشش ہوتی ہے تو کشمیر پر اقوام متحدہ کی قراردادیں آڑے آتی ہیں۔بھارت ، جموں و کشمیر اور آزاد کشمیر کی قیادتوں کی طرف سے بھی مخالفت ہوتی ہے اور پاکستان بھی کشمیرپر اپنی اصولی موقف اور خارجہ پالیسی کے پیش نظر گلگت بلتستان کو آئینی حقوق نہیں دے سکی ہے۔
    اسلام آبادسیلف گورنینس آرڈر 2009 ء کے تحت گلگت بلتستان میں اپنا انتظامی امور چلا رہا ہے۔گلگت بلتستان ایک ہی وقت میں دو انتظامی سیٹ اپ کا حامل ہے ایک سیٹ اپ ریاستی طرزکی ہے تو دوسری سیٹ اپ صوبائی طرز کی ہے۔ ریاستی طرز حکومت کے تحت گلگت بلتستان میں سینیٹ طرز کا ایک ادارہ موجود ہے جسے” گلگت بلتستان کونسل “کہا جاتا ہے جس کا سربراہ وزیر اعظم پاکستان ہے جبکہ صوبائی طرز کی سیٹ اپ کے تحت” گلگت بلتستان قانون ساز اسمبلی “موجود ہے جس میں وزیر اعلیٰ اور گورنر کے عہدے متعارف کرائے گئے ہیں ۔تاہم انتظامی کنٹرول میں ہونے کے باوجود گلگت بلتستان پاکستان کا آئینی حصہ نہیں ہے، یہ خطہ آزاد کشمیر اور جموں و کشمیر حکومتوں کے دائرہ کار سے بھی باہر ہیں ۔ گلگت بلتستان کے لوگوں کو نہ اپنی یکم نومبر 1947ء کی آزادجمہوریہ گلگت(Gilgit Republic) کی بحالی کی اجازت دی جاتی ہے اور نہ ہی ریاست پاکستان کا حصہ بنایا جاتا ہے، اور نہ ہی آزاد کشمیر حکومت میں ملایا جاتا ہے اسی لئے یورپین یونین کی رکن ممبر ایما نکلسن کی رپورٹ 2007 ء میں گلگت بلتستان کو دنیا کے نقشے پر کالا دائرہ(Black Hole) کہا گیا ہے اور بین الاقوامی سطح پر گلگت بلتستان کو دنیا کی آخری نو آبادیات Last Colony of the World) ( سے بھی جانا جاتا ہے۔
    گلگت بلتستان پاکستان اور بھارت کے درمیان کشمکش کا میدان بھی ہے اور عالمی طاقتوں کو مداخلت کے لئے پر کشش سامان بھی۔ پاکستان اور چین کی اس خطے کی متنازعہ حیثیت کو نظر انداز کرتے ہوئے اقتصادی راہداری گزارنے کی حکمت عملی سے بھارت خاصا پریشان نظرآرہا ہے ۔جوں جوں پاکستان اور چین کی قربتوں میں اضافہ ہوگا بھارت بھی امریکہ کے ساتھ اپنی تعلقات کو مضبوط کرے گا ۔اگر پاکستان اور بھارت باہمی مذاکرات سے مسئلہ کشمیر کا حل نکالنے میں کامیاب نہیں ہوتا تو اقوام متحدہ اپنی قرار دادوں پر عمل در آمد کروانے کے لئے مستقبل قریب میں امن مشن بھیج سکتی ہے ، اقوام متحدہ کی امن مشن(UN Peace Mission) کا مسکن گلگت بلتستان ہی ہو سکتا ہے کیونکہ” مظفر آباد اور سری نگر “کے مسائل کا حل” گلگت” میں تلاش کیا جا سکتا ہے۔ اس لئے کہا جاتا ہے کہ گلگت بلتستان تنازعہ کشمیر کی چابی(Key of Kashmir Dispute) ہے ، تنازعہ کشمیرکے تالے کو گلگت بلتستان کی چابی سے ہی کھولا جا سکتا ہے۔ دوسری اہم بات یہ ہے کہ اقوام متحدہ وہاں جائے گی جہاں امریکہ چاہے گا ۔ امریکہ وہاں جانا چاہے گا جہاں سے وہ اپنی معاشی حریف کو نکیل دے سکے ، چین کی معاشی اونٹ کو گلگت بلتستان کی بلند و بالا پہاڑی سلسلوں کے درمیان نکیل دی جا سکتی ہے ۔گلگت بلتستان ان دنوں تشخص کی بحران) (Identity Crisis سے گزر رہا ہے اور ان تمام صورت حال میں اگر اقوام متحدہ نے گلگت بلتستان کی تاریخی قومی تشخص(Historical National Identity) کو تسلیم کرنے کی حامی بھرلی تو تعجب کی بات نہیں ہوگی کیونکہ گلگت بلتستان کی قوم پرست جماعتیں کئی سالوں سے عالمی رائے عامہ کو اس بات پر قائل کرنے کے لئے موثر جد و جہد کر رہی ہیں۔حکومت کی طرف سے خطے کے عوام کی حقوق کے لئے کی جانے والی جد و جہد کو انڈیا سے جوڑنے اور سیاسی رہنماؤں پر غداری کے مقدمات قائم کرنے کی حکمت عملی سے حالات کی سنگینی اور غیرمحسوس دباؤ کا بخوبی اندازہ لگایا جا سکتا ہے۔
    گلگت بلتستان پاکستان اور چین کو ملانے والا واحد خطہ ہے ، پاکستان چین اقتصادی راہداری گلگت بلتستان سے ہی ہوکر گزرتی ہے ۔ گلگت بلتستان ایک متنازعہ خطہ ہونے کی وجہ سے جہاں اس اقتصادی راہداری کی قانونی حیثیت پر سوالات اٹھ رہے ہیں اور CPEC دن بہ دن متنازعہ ہوتا جا رہا ہے۔ اس ضمن میں کئی باتیں زیر غور آ سکتی ہیں۔ اولا اس اقتصادی راہداری کو گلگت بلتستان سے گزارے بغیر گوادر تک پہنچانے کے لئے متبادل راستہ تلاش کرے ثانیا اس اقتصادی راہداری سے قبل حکومت گلگت بلتستان کو پاکستان کا آئینی حصہ بنائے ، ثالثا یکم نومبر 1947ء کی آزاد و خود مختار ریاست کوبحال کرنے کا اعلان کر کے گلگت بلتستان کو مسئلہ کشمیرسے الگ تھلگ کرے
    اور گلگت بلتستان کی حکومت کے ساتھ معاملات طے کر کے CPEC پر عمل در آمد کو یقینی بنائے ۔یہ تینوں تجاویز فی الحال کسی بھی فریق کے لئے قابل قبول نظر نہیں آتی نہ پاکستان گلگت بلتستان کو اپنا حصہ بنانے کی پوزیشن میں ہے نہ انڈیا گلگت بلتستان پر اپنی دعوی ٰسے دستبردار ہونے والا ہے اور نہ ہی سرحد کے دونوںآرپارکی کشمیری قیادت اس طرح کی کسی بھی تجویز پر عمل ہونے دے گی ۔یہ بات کسی سے ڈھکی چھپی نہیں کہ حکومت پاکستان نے گلگت بلتستان کی آئینی حیثیت میں ردو بدل کرنے کی تجویز دی تو سب سے بڑا رد عمل کشمیری قیادت کی طرف سے سامنے آیا اور وزیر اعظم پاکستان میاں نواز شریف نے حریت رہنماؤں کے نام خط لکھ کروضاحت کر دی ہے کہ پاکستان
    کشمیریوں کی مرضی کے خلاف گلگت بلتستان کی متنازعہ حیثیت کو کبھی نہیں چھیڑے گا۔
    پاکستان اور چین کے درمیان اقتصادی راہداری کے منصوبے گلگت بلتستان کے انسانی و بنیادی حقوق سے محروم عوام کے لئے فی الحال شادمانی کا باعث بن رہا ہے کیونکہ PTV کے خبروں میں سال میں ایک بار گلگت کا نام سن کر سارا سال خوش رہنے والے لوگ آج عالمی میڈیا میں ہر سیکنڈ میں گلگت بلتستان کا ذکر سن رہے ہیں جو کہ صرف اور صرف CPEC کی مرہون منت ہے۔ گلگت بلتستان کی مستقبل کا دار و مدار CPEC پر ہے کیونکہ یہ منصوبہ یا تو عالمی مداخلت سے گلگت بلتستان کی آزادی و خود مختاری کا سبب بنے گا یا گلگت بلتستان کی تباہی و بربادی کا شاہراہ ثابت ہوگا۔ اس بات کا فیصلہ ہونے میں اب وقت نہیں لگے گا کیونکہ پاکستان چین اقتصادی راہداری گلگت بلتستان کے سینے سے گزرنے والی ہے اور انڈیا گلگت بلتستان کارڈ (Gilgit Baltistan Card)کھیلنے کے لئے عالمی کھلاڑیوں سے ساز بازکرتا ہوا نظر آ رہا ہے۔ پاکستان چین اقتصادی راہداری میں گلگت بلتستان کا حصہ ہو یا نہ ہو البتہ گلگت بلتستان CPEC کا حصہ ضرور ہے ۔ آج اگرپاکستان کی حکومت گلگت بلتستان کے لوگوں سے زندہ باد یا مردہ باد کے نعرے لگوا رہی ہے یا بھارت کے صدر ناریندر مودی اپنی خطاب میں گلگت کا ذکرکرتا ہے تو یہاں کے عوام سے ہمدردی میں نہیں بلکہ یہ دو روایتی حریفوں کی سرد جنگ (Proxy War) کی جھلکیاں اور میڈیا وار(Media War) کا تسلسل ہے۔ پاکستان اور بھارت کی سیاسی بیانات پرگلگت بلتستان کے عوام کو کسی بھی خوش فہمی کا شکار ہونے کی ضرورت نہیں ہے کیونکہ” دو مولوی کے درمیان مرغی حرام” کے مصداق گلگت بلتستان کسی بھی وقت ان دو حریف ریاستوں کی مفادات کی بھینٹ چڑھ سکتی ہے اور جنگی جنون کا نشانہ بن سکتاہے۔گلگت بلتستان کے عوام کی بھلائی اسی میں ہے کہ وہ سمجھداری کا مظاہرہ کرتے ہوئے گلگت بلتستان کی بقاء و سلامتی کا راستہ تلاش کرے یہ راستہ گلگت بلتستان اقتصادی راہداری(GBEC) کا منصوبہ ہی ہو سکتا ہے۔
    گلگت بلتستان اقتصادی راہداری (Gilgit Baltistan Econmic Corridor) تصوراتی کہانی نہیں بلکہ حقیقت پر مبنی عملی منصوبہ ہے ۔گلگت بلتستان اقتصادی راہداری ( جی بیک) گلگت بلتستان کو ہمسایہ ملکوں کی سیاسی و عسکری استحصالی پالیسیوں سے نجات دلانے میں مدد گار ثابت ہوگا۔گلگت بلتستان اقتصادی راہداری کا منصوبہ گلگت بلتستان کی آزادی و خود مختاری اور یہاں کے بیس لاکھ مظلوم و محکوم عوام کی بقاء و سلامتی اور روشن مستقبل کی ضمانت ہے ۔ گلگت بلتستان کے عوام کو CPEC میں حصہ مانگنے کے بجائے اپنی قومی تشخص کے ساتھ گلگت بلتستان اقتصادی راہداری منصوبے پر کام کروانے کے لئے اجتماعی جد و جہد کا آغاز کرنے کی ضرورت ہے۔
    CPEC پر ہونے والی عالمی سازشوں اور اس کے پس منظر میں ہمسایہ ملکوں کے درمیان جنگ کے بڑھتے ہوئے خدشات اور بین الاقوامی طاقتوں کی اس آڑ میں گلگت بلتستان میں مداخلت کے مبینہ امکانات کو روکنے کے لئے گلگت بلتستان اقتصادی راہداری منصوبے) (GBEC کو عملی جامہ پہنانے کی اشدضرورت ہے۔ گلگت بلتستان اکنامک کوریدور منصوبے کو قابل عمل اور قابل قبول بنانے کے لئے مسئلہ کشمیر کے حل تک اقوام متحدہ کی قراردادوں کی روشنی میں گلگت بلتستان میں” آزاد و خود مختار ریاستی اسمبلی” کا قیام عمل میں لایا جا سکتا ہے ۔ گلگت بلتستان میں اسٹیٹ سبجیکٹ رولز State Subject Rules 1927))کو فوری نافذالعمل کرکے مقامی آبادی کو اقلیت میں بدلنے اور لوگوں کی ملکیتی زمینوں کو بیرونی قبضے سے بچانے کے لئے قانون سازی کی جا سکتی ہے۔ پاکستان چین بھارت اور افغانستان کو ایک معاہدے کے ذریعے گلگت بلتستان کی سرحدوں کی پاسداری کرنے کا پابند بنا کر خطے کو غیر جنگی علاقہ(No War Zone) بنایا جا سکتا ہے۔ گلگت بلتستان کی تشخص ، آزادی ، خود مختاری اور سا لمیت کی بین الاقوامی گرانٹی اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل سے دلائی جا سکتی ہے۔ گلگت بلتستان،آزاد کشمیر، پاکستان ، چین ،انڈیا، افغانستان ، اور تاجکستان پر مشتمل گلگت بلتستان اکنامک کوریڈور فورم کا قیام عمل میں لاکر گلگت بلتستان اکنامک کوریڈور منصوبے پر کام شروع کیا جا سکتا ہے۔
    گلگت بلتستان اقتصادی راہداری کا منصوبہ اپنی انفرادیت اور افادیت کے پیش نظر ایک غیر متنازعہ منصوبہ ہوگا جس میں نہ صرف متنازعہ کشمیر کے سٹیک ہولڈرز شامل ہونگے بلکہ گلگت بلتستان کے تمام ہمسایہ ممالک برابری کی بنیاد پرشامل ہو سکیں گے، گلگت بلتستان اقتصادی راہداری جس طرح چین کو خلیجی ملکوں تک رسائی دے گی اسی طرح سینٹرل ایشین ممالک کو پاکستان، انڈیا اور بحرۂ ہند سے ملائے گی۔یہ خطہ وسطی ایشیائی ممالک اور جنوبی ایشیائی ممالک کے درمیان ایک پل کا کردار ادا کرے گا۔گلگت بلتستان اکنامک کوریڈور ایک غیر متنازعہ اور موثر اقتصادی راہداری کا منصوبہ ہوگاجس کے معاشی فوائد CPEC سے ہزار گنا زیادہ ہو گا ۔گلگت بلتستان اکنامک کوریڈور منصوبے کے ذریعے چین کو پاکستان، انڈیا اور کشمیر، پاکستان کو افغانستان اورتاجکستان ، افغانستان کو چین اور انڈیا ،کشمیر کو چین، تاجکستان اور افغانستان، انڈیاکو چین اور تاجکستان، جبکہ گلگت بلتستان کو تمام ہمسایہ ملکوں سے ملایا جا سکتا ہے ۔گلگت بلتستان اکنامک کوریڈور زمختلف ممالک کو اسطرح ایک دوسرے سے زمینی راستوں کے ذریعے منسلک کرے گی۔( تصویری خاکہ دیکھیں)
    گلگت بلتستان اکنامک کوریڈورمنصوبے میں زمینی راستوں کے علاوہ فضائی راستے بھی شامل کئے جا سکتے ہیں ، سکردو ، گلگت ، دوشنبے، کاشغر، کابل، اسلام آباد، مظفر آباد اور سر ی نگر ائر پورٹس کو انٹر نیشنل ائیرپورٹس کا درجہ دے کر ائیر ٹریڈ (Air Trade)کو فروغ دیا جا سکتا ہے۔ اس منصوبے سے نہ صرف ہمسایہ ملکوں کے درمیان تجارتی سرگرمیوں میں اضافہ ہوگا بلکہ باہمی تعلقات کو بھی فروغ ملے گا جس سے تمام ممالک کے عوام خوشحالی ہونگے ۔گلگت بلتستان اکنامک کوریڈور سے بین الملکی سیاحت کے شعبے کو فروغ ملے گا جس سے کروڑوں ڈالرزکا زر مبادلہ حاصل ہوگا۔اس راہداری منصوبے سے گلگت بلتستان معاشی حب (Economical Pivot)بن جائے گا ۔ یہاں کے عوام کی بنیادی و انسانی حقوق کو تحفظ ملے گا، معاشی حالت میں بہتری آئے گی اور گلگت بلتستان عالمی تجارتی مرکز کے طور پر ابھر کر سامنے آئے گا۔ گلگت بلتستان کی انتظامی امور چلانے کے لئے حکومت پاکستان کو گرانٹ دینے کی ضرورت نہیں پڑے گی کیونکہ اس اقتصادی راہداری کی آمدنی گلگت بلتستان کی سالانہ ترقیاتی بجٹ سے لاکھ گنا زیادہ ہوگا۔
    گلگت بلتستان اکنامک کوریڈور صدیوں پرانی تجارتی راستہ ” شاہراہ ریشم کی احیا ء نو (Renevation of Silk Routes) ہے ۔ جو 1947ء سے عوامی نقل و حمل اور تجارت کے لئے ممنوع قرار دیے جا چکے ہیں۔ گلگت بلتستان اکنامک کوریڈور مسئلہ کشمیر کو حل کرنے ، پاکستان بھارت چین اور افغانستان کے تعلقات کو خوشگوار بنانے اور گلگت بلتستان میں بین الاقوامی مداخلتوں کا راستہ روکنے میں کلیدی کردار ادا کر سکتا ہے۔ جس سے چار ہمسایہ ایٹمی ممالک کے درمیان ایٹمی تصادم کا خطرہ ٹل سکتا ہے ۔ سب سے بڑ ھ کرگلگت بلتستان اکنامک کوریڈورپاکستان ، چین ہندوستان ، افغانستان اور تاجکستان میں بسنے والے اربوں انسانوں کو امن و سکون اور
    آشتی سے زندگی گزارنے کے لئے وسائل کی فراہمی کا عالمی منصوبہ ثا بت ہوگا۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ چین ، پاکستان ، انڈیا، تاجکستان اورافغانستان اس عالمی معاشی راہداری کے منصوبے کو عملی جامہ پہنانے کے لئے سر جوڑ کر بیٹھیں تاکہ گلگت بلتستان اکنامک کوریڈور منصوبے کو پایہ تکمیل تک پہنچا کر سیاسی و معاشی فوائد حاصل کیا جا سکے۔گلگت بلتستان کے عوام کو فیصلہ کرنا ہوگا کہ وہ CPEC کا”حصہ دار” بننا چاہتی ہے یا GBEC کا” مالک” کہلانا چاہتی ہے۔۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

x

Check Also

OPINION: The other side of Islam |Fabian Dawson|PASSU TIMES

Share this on WhatsAppDawson: The other side of ...